روس اور ایران کے صدور کی علاقے کی صورت حال پر ٹیلیفونی گفتگو Iran’s President: Ceasefire shouldn’t become opportunity for terrorists to revitalise

صدر مملکت حسن روحانی نے روسی صدر کے ساتھ ٹیلی فون پر بات چیت کرتے ہوئے شام میں جنگ بندی، جھڑپوں کے خاتمے اور انسان دوستانہ امداد کی ترسیل کے آغاز کو شامی عوام کے مفادات کے تحفظ کی جانب اہم قدم قرار دیا۔ صدر مملکت نے یہ بات زور دیکر کہی کہ جنگ جنگ بندی کو دہشت گردوں کے زور پکڑنے اور مالی اور ہتھیاروں کی امداد جمع کرنے کا سبب نہ بننے دیا جائے۔ ڈاکٹر حسن روحانی نے شام میں سیاسی عمل کے بارے میں ایران کے موقف کی وضاحت اور شامی عوام کی مدد کی خاطر تہران ماسکو تعاون اور صلاح و مشورے کے عمل کو جاری رکھنے کی ضرورت پر زور دیا۔ صدر مملکت نے کہا کہ روس کے موثر فضائی حملوں اور شامی فوج اور عوامی رضاکاروں کی جاں فشانی کے نتیجے میں دہشت گرد اور ان کے حامی، مذاکرات پر مجبور ہو گئے اور انہیں پتہ چل گیا کہ فوجی اقدامات کسی کے بھی فائدے میں نہیں ہیں۔ صدر ایران نے شام میں مجوزہ جنگ بندی کے سمجھوتے میں پائے جانے والے ابہامات اور نقائص کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اس حوالے سے تشویش کو دور کرنے کے لئے جنگ بندی معاہدے میں پائے جانے والے تمام نقائص اور ابہامات کو دور کئے جانے کی ضرورت ہے۔ اس موقع پر روس کے صدر ولادیمیر پوتن نے بھی شام میں مجوزہ جنگ بندی معاہدے کے بارے میں ہونے والے مذاکرات کی تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ روس ایران تعلقات باہمی اعتماد اور تعمیری سوچ کی بنیادوں پر استوار ہیں اور اسی وجہ سے تہران اور ماسکو، شام کے معاملے میں ایک دوسرے کے ساتھ قریبی تعاون کر رہے ہیں۔

روس کے صدر نے مجوزہ جنگ بندی معاہدے میں پائے جانے والے نقائص کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ جنگ بندی اور سرحدوں کی کڑی نگرانی کی ضرورت ہے تاکہ دہشت گردوں کی رفت و آمد، اسلحے کی ترسیل اور لاجسٹک سپورٹ کا راستہ بند کیا جا سکے۔ روس کے صدر نے شامی عوام اور پناہ گزینوں تک امداد کی فراہمی کو یقینی بنانے اور شام کی ارضی سالمیت کے تحفظ پر زور دیتے ہوئے کہا کہ داعش، جبہۃ النصرہ اور دیگر دہشت گرد گروہوں کے خلاف جنگ، یقینا جاری رہے گی۔ قابل ذکر ہے کہ امریکہ اور روس نے اعلان کیا ہے کہ انہوں نے شام میں ستائیس فروری سے جنگ بندی شروع کرانے پر اتفاق کر لیا ہے۔ شام میں مختلف دہشت گرد گرہوں کی سرگرمیوں کی وجہ سے بعض علاقوں میں پچھلے پانچ سال سے بدامنی کا سلسلہ جاری ہے۔

 

President Hassan Rouhani held a telephone conversation with the President of Russia, Vladimir Putin and described a cease-fire, putting an end to the conflict, and starting altruistic aids are beneficial to Syrian people, stressing that the cease-fire should not become an opportunity for terrorists to revitalise and receive new financial supports and weaponry.

In this telephone conversation which was held on Wednesday, Dr Rouhani said: “In the process of cease-fire in Syria, delivering aids to displaced Syrians should be done under the central government’s supervision”.

“The freeing process of hostages and innocent people should be done quickly, the monitoring process of the cease-fire should be clarified, and Syrian borders should be closely controlled in order to prevent terrorists’ access and delivery of financial support and weaponry to them” continued Rouhani.

Explaining Iran’s stance on the political process in Syria, Dr Rouhani stressed bolstering Tehran-Moscow negotiations to help the oppressed Syrian people and said: “Without a doubt, effective Russian air strikes, Syrian army ground operations, and Syrian popular forces have forced terrorists and their supporters to the negotiating table and they understood that military action is not beneficial to anybody in Syria”.

“This agreement has ample ambiguities and deficiencies, elimination of which are essential for assuaging concerns” he said referring to the cease-fire agreement.

President Rouhani mentioned agreements reached during Russian Defence Minister’s visit to Tehran and called them as being “not enough” and added: “Combatting terrorism and extremist groups should not be affected”.

In this telephone conversation which was initiated by President Putin, the Russian President said: “Iran-Russia relations are based on constructive and mutual trust and in this framework, we need close coordination and cooperation with each other on the Syrian issue”.

He also referred to the shortcomings of the cease-fire agreement and said: “Syrian borders should be protected in order to prevent terrorists entering the country, as well as the transfer of weaponry and financial and logistic help to the terrorist groups”.

Putin underlined commitment to combat ISIS, al-Nusra Front, and other terrorist groups.

He also said that Syria’s sovereignty and territorial integrity should not be compromised while the helping process of Syrian refugees is underway.

Share This:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

x

Check Also

Karachi police illegally detains 10 Shia students

Karachi police has raided residential flats and rounded up at least 10 Shia students originally ...